شہاب چہرہ کوئی گم شدہ ستارہ کوئی

عرفان صدیقی

شہاب چہرہ کوئی گم شدہ ستارہ کوئی

عرفان صدیقی

MORE BYعرفان صدیقی

    شہاب چہرہ کوئی گم شدہ ستارہ کوئی

    ہوا طلوع افق پر مرے دوبارہ کوئی

    امید واروں پہ کھلتا نہیں وہ باب وصال

    اور اس کے شہر سے کرتا نہیں کنارہ کوئی

    مگر گرفت میں آتا نہیں بدن اس کا

    خیال ڈھونڈھتا رہتا ہے استعارہ کوئی

    کہاں سے آتے ہیں یہ گھر اجالتے ہوئے لفظ

    چھپا ہے کیا مری مٹی میں ماہ پارہ کوئی

    بس اپنے دل کی صدا پر نکل چلیں اس بار

    کہ سب کو غیب سے ملتا نہیں اشارہ کوئی

    گماں نہ کر کہ ہوا ختم کار دل زدگاں

    عجب نہیں کہ ہو اس راکھ میں شرارہ کوئی

    اگر نصیب نہ ہو اس قمر کی ہم سفری

    تو کیوں نہ خاک گزر پر کرے گزارہ کوئی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY