تیری خاطر یہ فسوں ہم نے جگا رکھا ہے

فارغ بخاری

تیری خاطر یہ فسوں ہم نے جگا رکھا ہے

فارغ بخاری

MORE BYفارغ بخاری

    تیری خاطر یہ فسوں ہم نے جگا رکھا ہے

    ورنہ آرائش افکار میں کیا رکھا ہے

    ہے ترا عکس ہی آئینۂ دل کی زینت

    ایک تصویر سے البم کو سجا رکھا ہے

    برگ صد چاک کا پردہ ہے شگفتہ گل سے

    قہقہوں سے کئی زخموں کو چھپا رکھا ہے

    اب نہ بھٹکیں گے مسافر نئی نسلوں کے کبھی

    ہم نے راہوں میں لہو اپنا جلا رکھا ہے

    ہم سے انساں کی خجالت نہیں دیکھی جاتی

    کم سوادوں کا بھرم ہم نے روا رکھا ہے

    کس قیامت کا ہے دیدار ترا وعدہ شکن

    دل بے تاب نے اک حشر اٹھا رکھا ہے

    کوئی مشکل نہیں پہچان ہماری فارغؔ

    اپنی خوشبو کا سفر ہم نے جدا رکھا ہے

    مأخذ :
    • کتاب : Karwaan-e-Ghazal (Pg. 149)
    • Author : Farooq Argali
    • مطبع : Farid Book Depot (Pvt.) Ltd (2004)
    • اشاعت : 2004

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY