تری یاد میں کب قیامت نہ ٹوٹی ترے غم میں کب حشر برپا نہ دیکھا

جوشؔ ملسیانی

تری یاد میں کب قیامت نہ ٹوٹی ترے غم میں کب حشر برپا نہ دیکھا

جوشؔ ملسیانی

MORE BY جوشؔ ملسیانی

    تری یاد میں کب قیامت نہ ٹوٹی ترے غم میں کب حشر برپا نہ دیکھا

    بجز اک نگاہ مسیحا نفس کے محبت کے ماروں نے کیا کیا نہ دیکھا

    بہت سیر کی باغ جنت کی ہم نے مگر کچھ مزا زندگی کا نہ دیکھا

    کسی دل میں درد محبت نہ پایا کسی دل میں داغ تمنا نہ دیکھا

    بہت مرد میداں بھی دنیا میں دیکھے شجاعت پہ نازاں بھی دنیا میں دیکھے

    مگر چوٹ سہہ جائے تیر نظر کی یہ دل یہ کلیجا کسی کا نہ دیکھا

    یہی ہے نظارا تو کیا ہے نظارا نہ شان جمالی نہ شان جلالی

    یہ دھندلا سا پرتو یہ مستور جلوہ برابر ہے ہم کو تو دیکھا نہ دیکھا

    جنون محبت میں دیوانگی میں تری بے رخی کا بھی میں قدرداں ہوں

    بڑا تو نے احسان مجھ پر کیا یہ تماشا بنا کر تماشا نہ دیکھا

    ترے آستاں کا پتہ کس سے پائیں کرے رہبری کون بھٹکے ہوؤں کی

    یہ راہ طلب ہے کہ راہ عدم ہے کسی کا بھی نقش کف پا نہ دیکھا

    محبت کہاں یہ تو بے چارگی ہے ستم بھی سہیں پھر کرم اس کو سمجھیں

    یہ جبر اس لیے کر لیا ہے گوارا کہ اس کے سوا کوئی چارا نہ دیکھا

    نیاز محبت سے یہ بے نیازی خلوص محبت سے اتنا تغافل

    مرا درد تم نے مرا حال تم نے نہ جانا نہ سمجھا نہ پوچھا نہ دیکھا

    تمہیں جوشؔ ہم خوب پہچانتے ہیں تمہاری بلا نوشیاں جانتے ہیں

    کہاں تم کہاں پارسائی کا جامہ کبھی ہم نے ایسا دکھاوا نہ دیکھا

    مآخذ:

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY