الفت نے تری ہم کو تو رکھا نہ کہیں کا

واجد علی شاہ اختر

الفت نے تری ہم کو تو رکھا نہ کہیں کا

واجد علی شاہ اختر

MORE BYواجد علی شاہ اختر

    الفت نے تری ہم کو تو رکھا نہ کہیں کا

    دریا کا نہ جنگل کا سما کا نہ زمیں کا

    اقلیم معانی میں عمل ہو گیا میرا

    دنیا میں بھروسہ تھا کسے تاج و نگیں کا

    تقدیر نے کیا قطب فلک مجھ کو بنایا

    محتاج مرا پاؤں رہا خانۂ زیں کا

    اک بوریے کے تخت پہ اوقات بسر کی

    زاہد بھی مقلد رہا سجادہ نشیں کا

    اخترؔ قلم فکر کے بھی اشک ہیں جاری

    کیا حال لکھوں اپنے دل زار و حزیں کا

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    الفت نے تری ہم کو تو رکھا نہ کہیں کا نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY