وحشتؔ مبتلا خدا کے لیے

وحشتؔ رضا علی کلکتوی

وحشتؔ مبتلا خدا کے لیے

وحشتؔ رضا علی کلکتوی

MORE BYوحشتؔ رضا علی کلکتوی

    وحشتؔ مبتلا خدا کے لیے

    جان دیتا ہے کیوں وفا کے لیے

    آشنا سب ہوئے ہیں بیگانے

    ایک بیگانہ آشنا کے لیے

    ہم نے عالم سے بے وفائی کی

    ایک معشوق بے وفا کے لیے

    تھا اسے ذوق عاشق آزاری

    خوب میں نے مزے جفا کے لیے

    غالب آئی فرامشی اس کی

    وعدہ تڑپا کیا وفا کے لیے

    یہ بھی تیری گدا نوازی تھی

    میں نے بوسے جو نقش پا کے لیے

    ذوق نظارہ نے کیا ہے خاک

    سرمہ ہوں چشم سرمہ سا کے لیے

    جستجو ننگ آرزو نکلی

    درد رسوا ہوا دوا کے لیے

    بڑھ چلی ہے بہت حیا تیری

    مجھ کو رسوا نہ کر خدا کے لیے

    ہے خموشی مجھے زباں وحشتؔ

    فکر کیا عرض مدعا کے لیے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY