یاد ایامے کوئی وجہ پریشانی تو تھی

کوثر جائسی

یاد ایامے کوئی وجہ پریشانی تو تھی

کوثر جائسی

MORE BYکوثر جائسی

    یاد ایامے کوئی وجہ پریشانی تو تھی

    آنکھ یوں خالی نہیں تھی اس میں حیرانی تو تھی

    لب پہ مہر خامشی پہلے بھی لگتی تھی مگر

    آہ کی رخصت تو تھی اشکوں کی ارزانی تو تھی

    تھی نظر کے سامنے کچھ تو تلافی کی امید

    کھیت سوکھا تھا مگر دریا میں طغیانی تو تھی

    بزم سے اٹھے تو کیا خلوت میں جا بیٹھے تو کیا

    ترک دنیا پر بھی دنیا جانی پہچانی تو تھی

    درد اک جوہر ہے پیکر سے غرض رکھتا نہیں

    آنکھ میں آنسو نہ تھے لب پر غزل خوانی تو تھی

    مأخذ :
    • کتاب : Mujalla Dastavez (Pg. 224)
    • Author : Aziz Nabeel
    • مطبع : Edarah Dastavez (2010)
    • اشاعت : 2010

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY