یہ زمیں خواب ہے آسماں خواب ہے

فرحت شہزاد

یہ زمیں خواب ہے آسماں خواب ہے

فرحت شہزاد

MORE BYفرحت شہزاد

    یہ زمیں خواب ہے آسماں خواب ہے

    اک مکاں ہی نہیں لا مکاں خواب ہے

    جان لیوا سہی جستجو کی تھکن

    پر سہارا دیے اک جواں خواب ہے

    اس کی آنکھوں میں اپنائیت کی چمک

    میری آنکھوں کا اک بے اماں خواب ہے

    ٹوٹ جائے تو کچھ بھی نہیں کوئی بھی

    جس کے دم سے ہیں دونوں جہاں خواب ہے

    چلچلاتی ہوئی وقت کی دھوپ میں

    ساتھ اک سایۂ مہرباں خواب ہے

    تو سراب حسیں میں فریب نظر

    پیار تیرا مری جان جاں خواب ہے

    شادیٔ بے پنہ کا سبب ہے مگر

    وجہ آہ و فغاں بھی میاں خواب ہے

    زندگی کے کٹھن جنگلوں میں مرا

    ہر قدم راہ بر پاسباں خواب ہے

    جان شہزادؔ تنہائیاں ہیں اٹل

    اور باقی کا یہ کارواں خواب ہے

    مأخذ :
    • کتاب : urdu gazal ka magribi daricha (Pg. 125)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY
    بولیے