زندان صبح و شام میں تو بھی ہے میں بھی ہوں

اکبر حیدرآبادی

زندان صبح و شام میں تو بھی ہے میں بھی ہوں

اکبر حیدرآبادی

MORE BYاکبر حیدرآبادی

    زندان صبح و شام میں تو بھی ہے میں بھی ہوں

    اک گردش مدام میں تو بھی ہے میں بھی ہوں

    بے فرش و بام سلسلۂ کائنات کے

    اس بے ستوں نظام میں تو بھی ہے میں بھی ہوں

    بے سال و سن زمانوں میں پھیلے ہوئے ہیں ہم

    بے رنگ و نسل نام میں تو بھی ہے میں بھی ہوں

    اس دائمی حصار میں ہم کو مفر کہاں

    ذروں کے ازدحام میں تو بھی ہے میں بھی ہوں

    ہر تیرہ فام صبح کا ورثہ ہے مشترک

    ہر نور دیدہ شام میں تو بھی ہے میں بھی ہوں

    مأخذ :
    • کتاب : Urdu Gazal ka Magribi Daricha (Pg. 177)
    • Author : Dr. Jawaz Jafri
    • مطبع : Kitab Saray, Lahore (2011)
    • اشاعت : 2011

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY