بوڑھا درخت

زرینہ ثانی

رادھا کرشن سہگل سکریٹری، دہلی
1979 | مزید

مصنف: تعارف

زرینہ ثانی

زرینہ ثانی

ڈاکٹر زرینہ ثانی کی پیدائش 5 جولائی 1936ء کو ناگپور شہر میں ہوئی تھی۔ ان کے والد عبدلرحیم(چکّی والے) ترقی پسند تحریک کے مفکر تھے۔ اس وقت جب لڑکیوں کو تعلیم دلانا مناسب نہیں سمجھا جاتا تھا، تب بھی وہ ان کی تعلیم پر زور دیتے تھے اور چاہتے تھے کہ ان کی بیٹیوں کو صرف رسمی تعلیم ملے۔ وہ اپنے طالب علمی کے زمانے سے ہی لکھنے کا شوق رکھتی تھیں۔ 16 سال کی عمر میں ان کی پہلی کہانی "مطبوعہ" ماہ نامہ "بانو" میں نئی دہلی سے شائع ہوئی تھی۔

انہوں نے اپنی میٹرک تک کی تعلیم گورنمنٹ گرلز ہائی اسکول ناگپور سے 1953ء میں مکمّل کی۔ 17 سال کی عمر میں ان کی شادی کامٹھی کے عبدلحلیم ثانی کے ساتھ کر دی گئی۔ ان کا شروعاتی دنوں میں "زاری" تخلص تھا لیکن بعد میں اسے "ثانی" کر دیا۔

انہوں نے بی اے اور دو بار ایم اے کی ڈگری اردو اور فارسی زبان میں ناگپور یونیورسٹی سے حاصل کی۔ اس کے بعد انہوں نے ڈاکٹر سید رفیع الدین کے زیر نگراں "سیماب کی نظم نگاری" تحقیقی مقالہ پر پی ایچ ڈی کی ڈگری مکمّل کی۔ 1958ء میں بی اے پاس ہونے کے بعد انہوں نے عارضی استاد کے طور پر ایل اے ڈی کالج میں ملازمت کی اور صرف دو سال کے بعد وہ صدر شعبہ اردو کے عہدے پر فائز ہو گئیں۔
ان کی تصانیف میں "اردو شاعری کی ہندوستانی روح" 1967ء، "سیماب کی نظمیہ شاعری" 1978ء، "بوڑھا درخت" 1979ء، (مہر لال سونی۔ ضیاء فتح آبادی کی سوانح حیات)، "صفدر آہ۔بحیثیت شاعر" 1979ء شامل ہیں اور ان کی آخری کتاب "آئینہ غزل" جو کہ ڈاکٹر ونئے وائےکر کے ساتھ مل کر مرتب ہوئی تھی ، 1983ء میں ان کی وفات کے بعد شائع ہوئی۔ شاعری کے علاوہ انہوں نے کئی چھوٹی کہانیاں بھی لکھی ہیں جن میں "قصور اپنا نکل آیا"، "بادل تیرے ستم کا"، "عورت کی خودداری"، "خیال اپنا اپنا"، "مجرم ضمیر"، ایک کرن اجالے کی" اور "پھاٹک" شامل ہیں۔ ان کی تحریریں ہندوستان کے علاوہ پاکستان اور برطانیہ کے کئ رسالوں میں شائع ہو چکیں ہیں۔

انہوں نے غزل، پابند نظم، آزاد نظم اور نثری نظم کے علاوہ آزاد غزلیں بھی کہی ہیں۔ ان کی زندگی میں ان کا کوئی شعری مجموعہ شائع نہیں ہو سکا لیکن ان کی بہو سواتی ثانی نے زرینہ ثانی کے نام سے ایک ویب سائٹ جاری کیا ہے۔ ان کو مہاراشٹر اور بہار اردو اکادمیوں نے ایوارڈس سے نوازا اور ماہ نامہ ”شاعر“ بمبئی نے 2012ء میں ان پر ایک خصوصی شمارہ پیش کیا تھا۔ 14 جنوری 1982ء کو محض 45 سال کی عمر میں ان کا انتقال ہو گیا۔

.....مزید پڑھئے

مصنف کی مزید کتابیں

مزید

مقبول و معروف

مزید

کتابوں کی تلاش بہ اعتبار

کتابیں : بہ اعتبار موضوع

شاعری کی کتابیں

رسالے

کتاب فہرست

مصنفین کی فہرست

یونیورسٹی اردو نصاب