sheriyat

अरस्तू

डायरेक्टर क़ौमी कौंसिल बरा-ए-फ़रोग़-ए-उर्दू ज़बान, नई दिल्ली
1998 | अन्य

पुस्तक: परिचय

परिचय

دنیامیں بہت ہی کم ایسی کتابیں ہیں جنہیں عالمی سطح پر مقبولیت حاصل ہوئی ہو اور کبھی اس کی مقبولیت میں کمی نہیں آئی ہو ، انہی میں سے ایک ارسطو کی ’بوطیقا‘ یا ’فن شاعری ‘ ہے۔یہ کتاب دنیابھر میں نہ سہی البتہ یوروپ میں ادبی تنقید پر پہلی کتاب ہے ۔ شاید ہی کسی کتاب نے ادبی دنیا پر یا اردو ادب پر اتنااثر ڈالا ہوگا جتنا اس کتاب کا ہوا ۔ادبی تنقید میں ارسطو کی یہ کتاب صحیفہ آسمانی کے طور پر سمجھی جاتی ہے ۔جتنا آسمانی کتب کے تفاسیر اور شروحات لکھے گئے اسی طرح اس کتاب کے ایک ایک جملے کی تشریحات پر بے شمار مقالات و کتب لکھے گئے۔ زیر نظر اسی بوطیقا کا اردو ترجمہ ہے۔ یہ ترجمہ مشہور ادیب و نقاد شمس الرحمن فاروقی نے کیا ہے۔ ترجمہ ایس ایچ بُچر کے انگریزی ترجمے والے ایڈیشن کو بنیاد بنا کر کیا گیا ہے۔ گمان یہ کیا جاتا ہے کہ ارسطو کا اصل یونانی متن ناپید ہے اور بچر نے عربی ترجمے سے مدد لے کر ترجمہ مکمل کیا ہے ۔ اردو ترجمہ کرنے میں سلاست کا خاص لحاظ رکھا گیا ہے اور اس کے حواشی باریک بینی سے عمل میں لائے گئے ہیں۔ ترجمہ میں لفظاً و معناً دونوں طرح سے اصل متن سے قریب تر رہنے کی کوشش کی گئی ہے۔ حالانکہ بُچر نے اپنے انگریزی ترجمہ میں تہمید کو الگ کرکے نہیں دیا ہے اور نہ ہی انہوں نے عنوانات لگائے تھے لیکن یہاں پر ان کے نہج کو ترک کرتے ہوئے علاحدہ تمہید اور عنوانات کا بھی اہتمام کیا گیا ہے۔ بنیادی مباحث کی وضاحت کے لیے ایک مختصر تعارف بھی دیا گیا ہے۔

.....और पढ़िए

लेखक की अन्य पुस्तकें

पूरा देखिए

लोकप्रिय और ट्रेंडिंग

पूरा देखिए

पुस्तकों की तलाश निम्नलिखित के अनुसार

पुस्तकें विषयानुसार

शायरी की पुस्तकें

पत्रिकाएँ

पुस्तक सूची

लेखकों की सूची

विश्वविद्यालय उर्दू पाठ्यक्रम