urdu ghazal mein paikar tarashi

शहपर रसूल

डायरेक्टर क़ौमी कौंसिल बरा-ए-फ़रोग़-ए-उर्दू ज़बान, नई दिल्ली
2012 | अन्य

पुस्तक: परिचय

परिचय

اردو ادب میں امیج کو پیکر اور امیج سازی کو پیکرتراشی کی اصطلاحوں کے ذریعے پیش کیا جاتا ہے۔ پیکر کو ہم ایک ایسی لسانی تصویر کہہ سکتے ہیں جس کے ذریعے شاعر نہ صرف اپنے نازک ، نادر اور نایاب شعری تجربات کا اظہار کرتا ہے بلکہ ان کو نکھارنے ، سنوارنے اور روشن کرنے کا کام بھی کرتا ہے۔ پیکر ایک ایسا الہامی نزول ہے جس کا زیادہ تر حصہ لاشعوری ہوتا ہے اور وہ اس وقت ورود کرتا ہے جب شاعر کے جذبات بام عروج پر ہوتے ہیں۔ یہ ورود بنیادی طور پر شاعر کے جمالیاتی تجربوں سے متعلق ہوتا ہے۔ یعنی پیکرشاعر کے تصورات اور اس کے تخیل کی رہگزاروں سے متعلق ہوسکتا ہے ، اشیا اور ان کے اوصاف سے متعلق ہوسکتا ہے۔ علاوہ ازیں ان چیزوں اور واقعات سے متعلق بھی ہوسکتا ہے جن سے وہ گزرا ہو ، جو اس کی یادداشت میں محفوظ ہوں یا اس کو یاد بھی نہ ہوں۔ یعنی شاعر کے پیدا و پنہاں جمالیاتی تخلیقی اور مادی وغیر مادّی تجربوں کا عطر پیکر کہلاتا ہے۔پیکر شاعری کا وہ طاقتور لسانی عنصر یا اثر آفریں صورت اظہار ہے جو شاعر کے مافی الضمیر کو سامع و قاری کے ذہن پر پوری طرح منکشف کردیتا ہے اور جس سے تصور و خیال کی چلتی پھرتی تصویریں آنکھوں کے سامنے آجاتی ہیں۔ شاعر کا نصب العین اپنے اندرون کا اظہار ہوتا ہے اس لیے پیکر کو شاعر کی شخصیت کا آئینہ بھی کہا جاسکتا ہے۔زیر نظر کتاب شہپر رسول کی لکھی ہوئی کتاب ہے جس میں انھوں نے ادبی پیکر کے مفہوم ۔کلاسیکی اور نو کلاسیکی غزل میں پیکر تراشی ،ترقی پسند غزل میں پیکر تراشی ، ،جدید غزل میں پیکر تراشی ،وغیرہ موضوعات پر تفصیلی روشنی ڈالی گئی ہے۔

.....और पढ़िए

लेखक की अन्य पुस्तकें

पूरा देखिए

लोकप्रिय और ट्रेंडिंग

पूरा देखिए

पुस्तकों की तलाश निम्नलिखित के अनुसार

पुस्तकें विषयानुसार

शायरी की पुस्तकें

पत्रिकाएँ

पुस्तक सूची

लेखकों की सूची

विश्वविद्यालय उर्दू पाठ्यक्रम