ہم آج کہیں دل کھو بیٹھے

مجروح سلطانپوری

ہم آج کہیں دل کھو بیٹھے

مجروح سلطانپوری

MORE BYمجروح سلطانپوری

    دلچسپ معلومات

    یہ گیت فلم 'انداز' (1949) میں استمعال کیا گیا تھا، جسے نوشاد نے سر بخشا |

    ہم آج کہیں دل کھو بیٹھے

    یوں سمجھو کسی کے ہو بیٹھے

    ہم آج کہیں دل کھو بیٹھے

    ہر دم جو کوئی پاس آنے لگا

    بھید الفت کے سمجھانے لگا

    نظروں سے نظر کا ٹکرانا

    تھا دل کے لئے اک افسانہ

    ہم ہاتھوں سے دل کو کھو بیٹھے

    ہم آج کہیں دل کھو بیٹھے

    آنکھوں میں سمایا کوئی مگر

    کون آیا کسی کو کیا یہ خبر

    پوچھو تو یہی ہے اس کا پتا

    چنچل نیناں اور شوخ ادا

    ہم دل کی نیا ڈبو بیٹھے

    ہم آج کہیں دل کھو بیٹھے

    مأخذ :
    • کتاب : Kulliyat-e-Majrooh Sultanpuri (Pg. 196)
    • Author : Majrooh sultanpri
    • مطبع : Alhamd Publications

    موضوعات

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے