ہنگامہ ہے کیوں برپا تھوڑی سی جو پی لی ہے

اکبر الہ آبادی

ہنگامہ ہے کیوں برپا تھوڑی سی جو پی لی ہے

اکبر الہ آبادی

MORE BY اکبر الہ آبادی

    ہنگامہ ہے کیوں برپا تھوڑی سی جو پی لی ہے

    ڈاکا تو نہیں مارا چوری تو نہیں کی ہے

    barely have I sipped a bit, why should this uproar be

    It's not that I've commited theft or daylight robbery

    نا تجربہ کاری سے واعظ کی یہ ہیں باتیں

    اس رنگ کو کیا جانے پوچھو تو کبھی پی ہے

    the preachers prattle can be to inexerience ascribed

    how does he know the joys thereof, has he ever imbibed

    اس مے سے نہیں مطلب دل جس سے ہے بیگانہ

    مقصود ہے اس مے سے دل ہی میں جو کھنچتی ہے

    that wine is of little use which causes loss of sense

    I seek the wine that imbues the heart with love intense

    اے شوق وہی مے پی اے ہوش ذرا سو جا

    مہمان نظر اس دم ایک برق تجلی ہے

    her heart wishes to torture, mine wants to tolerate

    a strange heart she possesses, an odd one I do rate

    واں دل میں کہ صدمے دو یاں جی میں کہ سب سہہ لو

    ان کا بھی عجب دل ہے میرا بھی عجب جی ہے

    each speck does glitter with heavens brilliant glare

    each breath proclaims if I, exist God too is there

    ہر ذرہ چمکتا ہے انوار الٰہی سے

    ہر سانس یہ کہتی ہے ہم ہیں تو خدا بھی ہے

    stains besmirch the sun, it's nature's miracle

    Idols call me a heretic, it too must be God's will

    سورج میں لگے دھبا فطرت کے کرشمے ہیں

    بت ہم کو کہیں کافر اللہ کی مرضی ہے

    تعلیم کا شور ایسا تہذیب کا غل اتنا

    برکت جو نہیں ہوتی نیت کی خرابی ہے

    سچ کہتے ہیں شیخ اکبرؔ ہے طاعت حق لازم

    ہاں ترک مے و شاہد یہ ان کی بزرگی ہے

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    امانت علی خان

    امانت علی خان

    منجری

    منجری

    رنجیت رجواڑا

    رنجیت رجواڑا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY