یارو مجھے معاف رکھو میں نشے میں ہوں

میر تقی میر

یارو مجھے معاف رکھو میں نشے میں ہوں

میر تقی میر

MORE BY میر تقی میر

    INTERESTING FACT

    فلم سات لاکھ

    یارو مجھے معاف رکھو میں نشے میں ہوں

    اب دو تو جام خالی ہی دو میں نشے میں ہوں

    pardon me my friends- I am in a drunken stupor

    give me just an empty cup, now if you serve me more

    ایک ایک قرط دور میں یوں ہی مجھے بھی دو

    جام شراب پر نہ کرو میں نشے میں ہوں

    just a drop or two in every round you should now pour

    fill not my goblet to the brim, I should drink no more

    مستی سے درہمی ہے مری گفتگو کے بیچ

    جو چاہو تم بھی مجھ کو کہو میں نشے میں ہوں

    drunkenness makes my speech incoherent today

    As I'm not in my senses, say what you wish to say

    یا ہاتھوں ہاتھ لو مجھے مانند جام مے

    یا تھوڑی دور ساتھ چلو میں نشے میں ہوں

    either hold me by your hand as like a glass you would

    or else walk with me a while lest stumble, fall I should

    معذور ہوں جو پاؤں مرا بے طرح پڑے

    تم سرگراں تو مجھ سے نہ ہو میں نشے میں ہوں

    I am helpless that my feet don't tread in a proper way

    do not be annoyed with me I've had too much today

    بھاگی نماز جمعہ تو جاتی نہیں ہے کچھ

    چلتا ہوں میں بھی ٹک تو رہو میں نشے میں ہوں

    Friday prayers won't run away, they can surely wait

    I shall come, hold on a while, I'm in a drunken state

    نازک مزاج آپ قیامت ہیں میرؔ جی

    جوں شیشہ میرے منہ نہ لگو میں نشے میں ہوں

    miirji the frailty of your temperament is truly such

    brush not my lips like a cup for I've drunk too much

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    سلیم رضا

    سلیم رضا

    سی ایچ آتما

    سی ایچ آتما

    پنکج اداس

    پنکج اداس

    غلام علی

    غلام علی

    چھایا گانگولی

    چھایا گانگولی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY