اے عمر ناز تجھ کو گزارے گزر نہ تھا

قمر عباس قمر

اے عمر ناز تجھ کو گزارے گزر نہ تھا

قمر عباس قمر

MORE BYقمر عباس قمر

    اے عمر ناز تجھ کو گزارے گزر نہ تھا

    ہم بوریا نشینوں کا کوئی بھی گھر نہ تھا

    دنیائے ہست و بود میں میرے سوا تجھے

    سب قابل قبول تھے میں معتبر نہ تھا

    یہ دل جو میرے سینے میں بجتا ہے رات دن

    وہ درد سہہ چکا ہے کہ جو مختصر نہ تھا

    اک چاند رو رہا تھا سر آسمان عشق

    تاروں کی انجمن میں کوئی چارہ گر نہ تھا

    یہ شور و غلغلہ ہے کہ لٹتا ہے مے کدہ

    کیا واں پہ کوئی غالبؔ آشفتہ سر نہ تھا

    تھے اندرون ذات کئی لاکھ حادثات

    لیکن تمہاری یاد سے دل بے خبر نہ تھا

    امکاں چہار سو تھا سفر کا مگر قمرؔ

    تنہا کھڑا ہوا تھا کوئی ہم سفر نہ تھا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY