ایسے وہ داستان کھینچتا ہے

نبیل احمد نبیل

ایسے وہ داستان کھینچتا ہے

نبیل احمد نبیل

MORE BYنبیل احمد نبیل

    ایسے وہ داستان کھینچتا ہے

    ہر یقیں پر گمان کھینچتا ہے

    تیری فرقت کا ایک اک لمحہ

    جسم سے میری جان کھینچتا ہے

    جب بھی میں آسماں کو چھونے لگوں

    پاؤں کو مہربان کھینچتا ہے

    منزل زیست کے کسی بھی طرف

    اپنی جانب نشان کھینچتا ہے

    میں حقیقت جہاں بھی لکھتا ہوں

    وہ وہی داستان کھینچتا ہے

    جب حقیقت بیاں کروں اس کی

    میرے منہ سے زبان کھینچتا ہے

    سر زمین وطن پہ اب وہ نبیلؔ

    اپنا ہر سو مکان کھینچتا ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY