اپنا ہر انداز آنکھوں کو تر و تازہ لگا

زہرا نگاہ

اپنا ہر انداز آنکھوں کو تر و تازہ لگا

زہرا نگاہ

MORE BY زہرا نگاہ

    اپنا ہر انداز آنکھوں کو تر و تازہ لگا

    کتنے دن کے بعد مجھ کو آئینہ اچھا لگا

    سارہ آرائش کا ساماں میز پر سوتا رہا

    اور چہرہ جگمگاتا جاگتا ہنستا لگا

    ملگجے کپڑوں پہ اس دن کس غضب کی آب تھی

    سارے دن کا کام اس دن کس قدر ہلکا لگا

    چال پر پھر سے نمایاں تھا دلآویزی کا زعم

    جس کو واپس آتے آتے کس قدر عرصہ لگا

    میں تو اپنے آپ کو اس دن بہت اچھی لگی

    وہ جو تھک کر دیر سے آیا اسے کیسا لگا

    RECITATIONS

    زہرا نگاہ

    زہرا نگاہ

    زہرا نگاہ

    اپنا ہر انداز آنکھوں کو تر و تازہ لگا زہرا نگاہ

    مآخذ:

    • کتاب : SHAAM KAA PAHLAA TAARAA (Pg. 72)
    • Author : Zehra Nigaah
    • مطبع : Shabbir Ahmed Bhattii (1980)
    • اشاعت : 1980

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY