عرض الم بہ طرز تماشا بھی چاہیے

جواد شیخ

عرض الم بہ طرز تماشا بھی چاہیے

جواد شیخ

MORE BYجواد شیخ

    عرض الم بہ طرز تماشا بھی چاہیے

    دنیا کو حال ہی نہیں حلیہ بھی چاہیے

    اے دل کسی بھی طرح مجھے دستیاب کر

    جتنا بھی چاہیے اسے جیسا بھی چاہیے

    دکھ ایسا چاہیے کہ مسلسل رہے مجھے

    اور اس کے ساتھ ساتھ انوکھا بھی چاہیے

    اک زخم مجھ کو چاہیے میرے مزاج کا

    یعنی ہرا بھی چاہیے گہرا بھی چاہیے

    اک ایسا وصف چاہیے جو صرف مجھ میں ہو

    اور اس میں پھر مجھے ید طولٰی بھی چاہیے

    رب سخن مجھے تری یکتائی کی قسم

    اب کوئی سن کے بولنے والا بھی چاہیے

    کیا ہے جو ہو گیا ہوں میں تھوڑا بہت خراب

    تھوڑا بہت خراب تو ہونا بھی چاہیے

    ہنسنے کو صرف ہونٹ ہی کافی نہیں رہے

    جوادؔ شیخ اب تو کلیجہ بھی چاہیے

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    جواد شیخ

    جواد شیخ

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY