بڑھ چلا عشق تو دل چھوڑ کے دنیا اٹھا

منیرؔ  شکوہ آبادی

بڑھ چلا عشق تو دل چھوڑ کے دنیا اٹھا

منیرؔ  شکوہ آبادی

MORE BYمنیرؔ  شکوہ آبادی

    بڑھ چلا عشق تو دل چھوڑ کے دنیا اٹھا

    خود بخود جوش مے ناب سے شیشہ اٹھا

    دست نازک سے زر گل کا بھی اٹھنا ہے محال

    یہ تو فرمائیے کس وجہ سے توڑا اٹھا

    جب پکارے لب جاں بخش سے وہ مر گئے ہم

    نا توانوں سے نہ بار دم عیسیٰ اٹھا

    خاکساروں میں نہیں ایسے کسی کی توقیر

    قد آدم مری تعظیم کو سایا اٹھا

    یاد اس بت کی نمازوں میں جو آئی مجھ کو

    تپش شوق سے ہر بار میں بیٹھا اٹھا

    مآخذ:

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY