بہار باغ ہو مینا ہو جام صہبا ہو

محمد رفیع سودا

بہار باغ ہو مینا ہو جام صہبا ہو

محمد رفیع سودا

MORE BYمحمد رفیع سودا

    بہار باغ ہو مینا ہو جام صہبا ہو

    ہوا ہو ابر ہو ساقی ہو اور دریا ہو

    روا ہے کہہ تو بھلا اے سپہر نا انصاف

    ریائے زہد چھپے راز عشق رسوا ہو

    بھرا ہے اس قدر اے ابر دل ہمارا بھی

    کہ ایک لہر میں روئے زمین دریا ہو

    جو مہرباں ہیں وہ سوداؔ کو مغتنم جانیں

    سپاہی زادوں سے ملتا ہے دیکھیے کیا ہو

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY