بہت برا ہوں مری جاں بہت برا ہوں میں

دیپک پرجاپتی خالص

بہت برا ہوں مری جاں بہت برا ہوں میں

دیپک پرجاپتی خالص

MORE BYدیپک پرجاپتی خالص

    بہت برا ہوں مری جاں بہت برا ہوں میں

    خلوص دیکھ مرا خود یہ کہہ رہا ہوں میں

    کچھ اک برائیاں مجھ میں ازل سے ٹھہری ہیں

    کچھ اس زمانے میں آ کر برا ہوا ہوں میں

    یہ شاعری نہیں دراصل ایک پردہ ہے

    بغیر شور کیے جس میں چیختا ہوں میں

    اگر کسی کو ملوں تو مجھے خبر کر دے

    پتا چلا ہے کہ کچھ دن سے گمشدہ ہوں میں

    گزرتے وقت کی عادت ہے سب بدل دینا

    جہاں کبھی میں زیادہ تھا اب ذرا ہوں میں

    مجھے سمجھنا بھلا سب کی دسترس میں کہاں

    کوئی کہانی میں تھوڑی ہوں فلسفہ ہوں میں

    ذرا سا وقت ہے پھر وقت ہی بتائے گا

    کہ سچ میں کون ہوں کیسا ہوں اور کیا ہوں میں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY