بہت سے مدعی نکلے مگر جاں باز کم نکلے

مرزا ہادی رسوا

بہت سے مدعی نکلے مگر جاں باز کم نکلے

مرزا ہادی رسوا

MORE BY مرزا ہادی رسوا

    بہت سے مدعی نکلے مگر جاں باز کم نکلے

    پس مجنوں ہزاروں عاشقوں میں ایک ہم نکلے

    نہیں ممکن کسی سے حسن کی باریکیاں حل ہوں

    ترے ہر تار گیسو میں ہمارے پیچ و خم نکلے

    یہ صورت ہو تو اپنا خاتمہ بالخیر ہو جائے

    ادھر ہم سر جھکائیں اور ادھر تیغ دو دم نکلے

    ہمیں ارمان ہے اس آستاں پر زندگی گزرے

    اسی حسرت میں جیتے ہیں کہ ان قدموں پہ دم نکلے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY