برسوں غم گیسو میں گرفتار تو رکھا

بیگم لکھنوی

برسوں غم گیسو میں گرفتار تو رکھا

بیگم لکھنوی

MORE BYبیگم لکھنوی

    برسوں غم گیسو میں گرفتار تو رکھا

    اب کہتے ہو کیا تم نے مجھے مار تو رکھا

    کچھ بے ادبی اور شب وصل نہیں کی

    ہاں یار کے رخسار پہ رخسار تو رکھا

    اتنا بھی غنیمت ہے تری طرف سے ظالم

    کھڑکی نہ رکھی روزن دیوار تو رکھا

    وہ ذبح کرے یا نہ کرے غم نہیں اس کا

    سر ہم نے تہہ خنجر خوں خوار تو رکھا

    اس عشق کی ہمت کے میں صدقے ہوں کہ بیگمؔ

    ہر وقت مجھے مرنے پہ تیار تو رکھا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY