بس ایک سانس لیا کھل کے لخت لخت ہوا

خورشید طلب

بس ایک سانس لیا کھل کے لخت لخت ہوا

خورشید طلب

MORE BYخورشید طلب

    بس ایک سانس لیا کھل کے لخت لخت ہوا

    کہ زندگی نہ ہوئی کانچ کا درخت ہوا

    بہت ذہین بھی ہونا وبال جاں ہے یہاں

    ہمارے ساتھ ہر اک امتحان سخت ہوا

    جہاں پہ مجھ کو حلیمی سے کام لینا تھا

    اسی مقام پہ لہجہ مرا کرخت ہوا

    نہ میں کسی کے لیے زاد وصل بن پایا

    نہ ہجرتوں میں مرا کوئی ساز رخت ہوا

    طلبؔ ہواؤں کے سینے پہ سانپ لوٹ گیا

    پھر ایک ننھا سا پودا گھنا درخت ہوا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY