بیان درد جب کرتا ہوں میں اولیٰ و ثانی میں

صاحب شریہ

بیان درد جب کرتا ہوں میں اولیٰ و ثانی میں

صاحب شریہ

MORE BYصاحب شریہ

    بیان درد جب کرتا ہوں میں اولیٰ و ثانی میں

    بہت ملتی محبت ہے مجھے پھر شعر خوانی میں

    سبھی ہیں پوچھتے کے عشق کرکے کیا ملا آخر

    بتاتا ہوں سکوں ملتا مجھے اس رائیگانی میں

    جہاں بھر میں جسے میں ڈھونڈھتا پھرتا رہا اکثر

    ملا بن بے وفا کردار وہ میری کہانی میں

    سبھی اپنوں سے یاں مجھ کو چھپانا اشک پڑتا ہے

    ہوئی برسات ایسی مل گئے سب اشک پانی میں

    بہت ہی مسکراتا تھا کبھی محفل میں یاروں کی

    نظر کس کی لگی ہے آج اس کی شادمانی میں

    سخنور جب سناتے ہیں محبت ہیر رانجھا کی

    تصور میں ترا کرتا ہوں ان کی ہر بیانی میں

    خفا صاحب ہوں تم سے میں بس اس اک بات کو لے کر

    خودی کو بیچ آئے تم نہ جانے کس گمانی میں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے