محبتیں جب شمار کرنا تو سازشیں بھی شمار کرنا

نوشی گیلانی

محبتیں جب شمار کرنا تو سازشیں بھی شمار کرنا

نوشی گیلانی

MORE BYنوشی گیلانی

    محبتیں جب شمار کرنا تو سازشیں بھی شمار کرنا

    جو میرے حصے میں آئی ہیں وہ اذیتیں بھی شمار کرنا

    جلائے رکھوں گی صبح تک میں تمہارے رستوں میں اپنی آنکھیں

    مگر کہیں ضبط ٹوٹ جائے تو بارشیں بھی شمار کرنا

    جو حرف لوح وفا پہ لکھے ہوئے ہیں ان کو بھی دیکھ لینا

    جو رائیگاں ہو گئیں وہ ساری عبارتیں بھی شمار کرنا

    یہ سردیوں کا اداس موسم کہ دھڑکنیں برف ہو گئی ہیں

    جب ان کی یخ بستگی پرکھنا تمازتیں بھی شمار کرنا

    تم اپنی مجبوریوں کے قصے ضرور لکھنا وضاحتوں سے

    جو میری آنکھوں میں جل بجھی ہیں وہ خواہشیں بھی شمار کرنا

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    نوشی گیلانی

    نوشی گیلانی

    RECITATIONS

    عذرا نقوی

    عذرا نقوی

    عذرا نقوی

    Mohabbatein jab shumar karna to sazishein bhi shumar karna عذرا نقوی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY