میز قلم قرطاس دریچہ سناٹا

عبدالرحمان واصف

میز قلم قرطاس دریچہ سناٹا

عبدالرحمان واصف

MORE BY عبدالرحمان واصف

    میز قلم قرطاس دریچہ سناٹا

    کمرا کھڑکی زرد اجالا سناٹا

    میری آنکھوں میں دھندلائی گہری چپ

    اور چہرے پر اترا پیلا سناٹا

    میری آنکھوں میں لکھی تحریر پڑھو

    ہجر تمنا وحشت صحرا سناٹا

    گونج اٹھی ہے میرے اندر خاموشی

    نس نس میں گھٹ گھٹ کر بہتا سناٹا

    اس کے ساتھ چلی آتی تھیں قلقاریں

    اس کے بعد ہوا ہے کتنا سناٹا

    پہلے میری ذات میں تھا موجود کوئی

    اب ہے میری ذات کا حصہ سناٹا

    جھاگ اڑاتے دریا کے ہنگامے پر

    نقش ہوا دل پر افسردہ سناٹا

    میں نے گھنٹوں اس امید پہ چپ سادھی

    شاید کہ وہ توڑ ہی دے گا سناٹا

    مل کر بین کریں سب میری ہجرت پر

    چاند اداسی جھیل کنارا سناٹا

    Tagged Under

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY