بجھ گئی دل کی روشنی راہ دھواں دھواں ہوئی

مخمور سعیدی

بجھ گئی دل کی روشنی راہ دھواں دھواں ہوئی

مخمور سعیدی

MORE BYمخمور سعیدی

    بجھ گئی دل کی روشنی راہ دھواں دھواں ہوئی

    صبح چلے کہاں سے تھے شام ہمیں کہاں ہوئی

    شوق کی راہ پر خطر طے تو کر آئے ہم مگر

    نذر حوادث سفر دولت جسم و جاں ہوئی

    عشق و جنوں کے واردات دیدہ و دل کے سانحات

    بیتی ہوئی ہر ایک بات دور کی داستاں ہوئی

    کوئی بھی اب نہیں رہا جس کو شریک غم کہیں

    دور طرب کی یاد بھی شامل رفتگاں ہوئی

    لٹ گئی کیسے دفعتاً روشنیوں کی انجمن

    آ کے کہاں سے خیمہ زن ظلمت بے کراں ہوئی

    کس کو خبر کہ ہم نے کیا خواب بنے ہیں عمر بھر

    کس سے کہیں کہ زندگی کس لیے رائیگاں ہوئی

    طرز بیاں تو بے قیاس تھے ترے غم زدوں کے پاس

    بول اٹھی نگاہ یاس بند اگر زباں ہوئی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY