چراغ شام تھا دن بھر بجھا رہا کوئی

شاہدہ مجید

چراغ شام تھا دن بھر بجھا رہا کوئی

شاہدہ مجید

MORE BY شاہدہ مجید

    چراغ شام تھا دن بھر بجھا رہا کوئی

    غروب شمس کے ہوتے ہی جل گیا کوئی

    بیان کر نہیں سکتا کبھی محاسن عشق

    کوئی ردیف غزل میں نہ قافیہ کوئی

    رفاقتوں میں عجب طرز اجنبیت تھا

    کہ ساتھ رہ کہ بھی ہم سے رہا جدا کوئی

    یہ رنگ درد کے آتے نہیں سخن میں یوں ہی

    نہال دل پہ مرے زخم ہے کھلا کوئی

    مرے سفر میں مری ہم سفر ہے تنہائی

    کہ دو قدم نہ مرے ساتھ چل سکا کوئی

    نہ عین پر ہی رکی شین پہ نہ قاف پہ ہی

    تمہاری یاد کی منزل نہ انتہا کوئی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY