ڈگمگاتا لڑکھڑاتا جھومتا جاتا ہوں میں

گیان چند جین

ڈگمگاتا لڑکھڑاتا جھومتا جاتا ہوں میں

گیان چند جین

MORE BYگیان چند جین

    ڈگمگاتا لڑکھڑاتا جھومتا جاتا ہوں میں

    تجھ تک اے باب فنا سینے کے بل آتا ہوں میں

    شہر کی باریکیوں میں پھنس گیا ہوں اس طرح

    چین کی اک سانس کی مہلت نہیں پاتا ہوں میں

    جب بھی ریگستانوں میں جانے کا ہوتا اتفاق

    گھٹنے گھٹنے ذات کی پرتوں میں دھنس جاتا ہوں میں

    چل کے باغ‌ سیب میں اوراق‌ جمشیدی پڑھوں

    اپنی کیفیت سے خود کو بے خبر پاتا ہوں میں

    گوشے گوشے میں فروزاں آتش لب ہائے سرخ

    اس شفق میں دم بہ دم آنکھوں کو نہلاتا ہوں میں

    آہ وہ آنکھیں کہ جن کے گرد ہے اودا غبار

    گہہ کنوئیں میں ڈوبتا ہوں گہہ ابھر آتا ہوں میں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے