دشت نوردی میں کوئی سات تھا

محمد اظہار الحق

دشت نوردی میں کوئی سات تھا

محمد اظہار الحق

MORE BYمحمد اظہار الحق

    دشت نوردی میں کوئی سات تھا

    میں بھی عجب منظر باغات تھا

    ذرہ تھا یا خار تھا جو کچھ بھی تھا

    میرے لیے شارح آیات تھا

    ڈوب گئے اس میں کئی پورے چاند

    در ترا چاہ طلسمات تھا

    مجھ کو یہ دھن سائے میں بیٹھیں کہیں

    تجھ کو مگر شوق مہمات تھا

    پاؤں تلے اڑتا ہوا تخت زر

    سر پہ مرے سایۂ جنات تھا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY