دھوپ حالات کی ہو تیز تو اور کیا مانگو

آسی رام نگری

دھوپ حالات کی ہو تیز تو اور کیا مانگو

آسی رام نگری

MORE BYآسی رام نگری

    دھوپ حالات کی ہو تیز تو اور کیا مانگو

    کسی دامن کی ہوا زلف کا سایہ مانگو

    اس سے کیا کم ہے کسی کے رخ زیبا کی ضیا

    ماہ و خورشید سے کیوں ان کا اجالا مانگو

    جس کے بعد اور نہ رہ جائے تمنا کوئی

    مانگنا ہو جو خدا سے وہ تمنا مانگو

    خوب ہے درد کی لذت یہ بڑی دولت ہے

    زخم دل کے لئے مرہم نہ مداوا مانگو

    جس سے چھائی ہوئی حالات کی ظلمت چھٹ جائے

    تم تو خورشید ہو خود سے وہ اجالا مانگو

    گر شب غم کو سحر چاہو بنانا آسیؔ

    کسی سلمیٰ سے ضیائے رخ زیبا مانگو

    مأخذ :
    • کتاب : Harf Harf Khowab (Pg. 79)
    • Author : asi ramnagari
    • مطبع : Nasim Pathara Po. Moghalsarai (Varansi) (1992)
    • اشاعت : 1992

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY