دل کسی خواہش کا اکسایا ہوا

اشفاق ناصر

دل کسی خواہش کا اکسایا ہوا

اشفاق ناصر

MORE BYاشفاق ناصر

    دل کسی خواہش کا اکسایا ہوا

    پھر مچل اٹھا ہے بہلایا ہوا

    جا تجھے تیرے حوالے کر دیا

    کھینچ لے یہ ہاتھ پھیلایا ہوا

    جس طرح ہے خشک پتوں کو ہوا

    میرے حصے میں ہے تو آیا ہوا

    یہ بگولے ہیں کہ استقبال قیس

    پھر رہا ہے دشت گھبرایا ہوا

    بزم میں بس اک رخ روشن کے فیض

    جو جہاں موجود تھا سایا ہوا

    کیا کروں اے کار دنیا کیا کروں

    وہ مجھے ہے پھر سے یاد آیا ہوا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے