دل طلب گار ناز مہوش ہے

ولی محمد ولی

دل طلب گار ناز مہوش ہے

ولی محمد ولی

MORE BYولی محمد ولی

    دل طلب گار ناز مہوش ہے

    لطف اس کا اگرچہ دل کش ہے

    مجھ سوں کیوں کر ملے گا حیراں ہوں

    شوخ ہے بے وفا ہے سرکش ہے

    کیا تری زلف کیا ترے ابرو

    ہر طرف سوں مجھے کشاکش ہے

    تجھ بن اے داغ بخش سینہ و دل

    چمن لالہ دشت آتش ہے

    اے ولیؔ تجربے سوں پایا ہوں

    شعلۂ آہ شوق بے غش ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY