دل زلف بتاں میں ہے گرفتار ہمارا

راسخ عظیم آبادی

دل زلف بتاں میں ہے گرفتار ہمارا

راسخ عظیم آبادی

MORE BY راسخ عظیم آبادی

    دل زلف بتاں میں ہے گرفتار ہمارا

    اس دام سے ہے چھوٹنا دشوار ہمارا

    بازار جہاں میں ہیں عجب جنس زبوں ہم

    کوئی نہیں اے وائے خریدار ہمارا

    تھی داور محشر سے توقع سو تجھے دیکھ

    وہ بھی نہ ہوا ہائے طرف دار ہمارا

    کیونکر نہ دم سرد بھریں ہم کہ ہر اک سے

    ملتا ہے بہت گرم کچھ اب یار ہمارا

    تجھ بن اسے یہ سمجھیں کہ ہے شعلۂ دوزخ

    گر ہو گل جنت گل دستار ہمارا

    راسخؔ یہ پس مرگ بھی ہم راہ رہے گا

    ہے یار کا غم یار وفادار ہمارا

    RECITATIONS

    فصیح اکمل

    فصیح اکمل

    فصیح اکمل

    دل زلف بتاں میں ہے گرفتار ہمارا فصیح اکمل

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY