دنیا سے داغ زلف سیہ فام لے گیا

منیرؔ  شکوہ آبادی

دنیا سے داغ زلف سیہ فام لے گیا

منیرؔ  شکوہ آبادی

MORE BYمنیرؔ  شکوہ آبادی

    دنیا سے داغ زلف سیہ فام لے گیا

    میں گور میں چراغ سر شام لے گیا

    کی ترک میں نے شیخ و برہمن کی پیروی

    دیر و حرم میں مجھ کو ترا نام لے گیا

    دوزخ میں جل گیا کبھی جنت میں خوش رہا

    مر کر بھی ساتھ گردش ایام لے گیا

    میں جستجوئے کفر میں پہونچا خدا کے پاس

    کعبہ تک ان بتوں کا مجھے نام لے گیا

    پہنا کفن تو کوچۂ قاتل میں پائی راہ

    کعبہ میں مجھ کو جامۂ احرام لے گیا

    نفرت ہوئی دورنگئ لیل و نہار سے

    میں صبح و شام اس کو لب بام لے گیا

    کچھ لطف عشق کا نہ ملا جیتے جی منیرؔ

    ناحق کا رنج مفت کا الزام لے گیا

    مآخذ:

    • کتاب : Intekhab-e-Kalam Muneer Shikohabadi (Pg. 20)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY