دور تک پھیلا ہوا پانی ہی پانی ہر طرف

شباب للت

دور تک پھیلا ہوا پانی ہی پانی ہر طرف

شباب للت

MORE BYشباب للت

    دور تک پھیلا ہوا پانی ہی پانی ہر طرف

    اب کے بادل نے بہت کی مہربانی ہر طرف

    حادثے ہر موڑ پر ہیں گھات میں کیا کیجیے

    کس قدر ارزاں ہے مرگ ناگہانی ہر طرف

    جا چھپے اندھی گپھا میں جو قد آور لوگ تھے

    اور بونوں کی ہوئی ہے حکمرانی ہر طرف

    آگ کے چپو ہوا کے بادباں مٹی کی ناؤ

    اور تا حد نظر پانی ہی پانی ہر طرف

    بے بسی پر اپنی خود الفاظ حیراں ہیں شبابؔ

    استعاروں نے بدل ڈالے معانی ہر طرف

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY