گوہر اشک سے لبریز ہے سارا دامن

خواجہ محمد وزیر

گوہر اشک سے لبریز ہے سارا دامن

خواجہ محمد وزیر

MORE BYخواجہ محمد وزیر

    گوہر اشک سے لبریز ہے سارا دامن

    آج کل دامن دولت ہے ہمارا دامن

    اے جنوں باد بہاری سے نہیں جنبش میں

    کچھ گریبان سے کرتا ہے اشارا دامن

    وصل کی رات ہے بگڑو نہ برابر تو رہے

    پھٹ گیا میرا گریبان تمہارا دامن

    جامہ چین نے نہیں یہ پھول چنے نرگس کے

    سیکڑوں آنکھوں سے کرتا ہے نظارا دامن

    بہت اے دست جنوں تنگ نظر آتا ہے

    باندھ دے دامن صحرا سے ہمارا دامن

    خوب پہونچا دیا اے دست جنوں ہاتھوں ہاتھ

    مل گیا آج گریبان سے سارا دامن

    آمد آمد مرے اشکوں کی مگر سن لی ہے

    جھاڑ کر گرد جو صحرا نے سنوارا دامن

    مآخذ:

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY