چمن میں تھے جو چمن ہی کی داستان سنتے

معین احسن جذبی

چمن میں تھے جو چمن ہی کی داستان سنتے

معین احسن جذبی

MORE BYمعین احسن جذبی

    چمن میں تھے جو چمن ہی کی داستان سنتے

    کوئی نوا کوئی نغمہ کوئی فغاں سنتے

    قدم نہ چھوڑتے راہوں کو تا بہ منزل شوق

    ہماری بات جو یہ اہل کارواں سنتے

    ترے قلم سے تو گلزار‌ بے نوا کا قفس

    تری زباں سے بھی کچھ حال بے زباں سنتے

    ہمارے درد کا طوفاں کہاں کہاں نہ اٹھا

    یہ شور آپ جہاں چاہتے وہاں سنتے

    اک عمر اپنی بھی گزری ہے اے چمن والو

    گلوں کے کنج میں اندیشۂ خزاں سنتے

    کسی کا رنج کسی کا الم کسی کا ملال

    اب اور کیا تھا جو ہم زیر آسماں سنتے

    گلوں سے بچ کے چلے بلبلوں سے کترائے

    وہ میرا قصۂ خونیں کہاں کہاں سنتے

    کچھ اس میں اپنا بھی سوز بیاں تھا اے جذبیؔ

    وگرنہ لوگ کب افسانۂ جہاں سنتے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY
    بولیے