کسی رنجش کو ہوا دو کہ میں زندہ ہوں ابھی

سدرشن فاکر

کسی رنجش کو ہوا دو کہ میں زندہ ہوں ابھی

سدرشن فاکر

MORE BYسدرشن فاکر

    کسی رنجش کو ہوا دو کہ میں زندہ ہوں ابھی

    مجھ کو احساس دلا دو کہ میں زندہ ہوں ابھی

    میرے رکتے ہی مری سانسیں بھی رک جائیں گی

    فاصلے اور بڑھا دو کہ میں زندہ ہوں ابھی

    زہر پینے کی تو عادت تھی زمانے والو

    اب کوئی اور دوا دو کہ میں زندہ ہوں ابھی

    چلتی راہوں میں یوں ہی آنکھ لگی ہے فاکرؔ

    بھیڑ لوگوں کی ہٹا دو کہ میں زندہ ہوں ابھی

    مأخذ :
    • کتاب : Jagjit Chatra ki Ghazlen (Pg. 116)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY