حال نہ پوچھو روز و شب کا کوئی انوکھی بات نہیں

ممتاز میرزا

حال نہ پوچھو روز و شب کا کوئی انوکھی بات نہیں

ممتاز میرزا

MORE BYممتاز میرزا

    حال نہ پوچھو روز و شب کا کوئی انوکھی بات نہیں

    دن کو کیسے رات کہیں ہم رات بھی اب تو رات نہیں

    لگنے کو تو صحن چمن میں دونوں اچھے لگتے ہیں

    کانٹوں میں جو اپنا پن ہے پھولوں میں وہ بات نہیں

    دل سے بھلا تو دیں ہم ان کو لیکن اس کو کیا کیجے

    صدیوں کی روداد بھلانا اپنے بس کی بات نہیں

    گلشن گلشن شاخ و شجر پر روز نشیمن جلتے ہیں

    کس نے کہا تھا موسم بدلا اگلے سے حالات نہیں

    ایک ذرا سی بات پہ کیوں ہے اتنا ہنگامہ ممتازؔ

    شیشۂ دل ہی تو ٹوٹا ہے اور تو کوئی بات نہیں

    مأخذ :
    • کتاب : Nuquush (Pg. 527)
    • Author : Mohammad Tufail
    • مطبع : Idara-e-Frog-e-Urdu, Lahore (1985,Issue No. 132)
    • اشاعت : 1985,Issue No. 132

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY
    بولیے