ہے درد کے انتساب سا کچھ

عرفان احمد

ہے درد کے انتساب سا کچھ

عرفان احمد

MORE BYعرفان احمد

    ہے درد کے انتساب سا کچھ

    وہ یاد آنگن میں خواب سا کچھ

    وہ آرزوئیں وہ تشنہ کامی

    حد نگہ تک سراب سا کچھ

    وہ ہجرتوں کے اداس موسم

    سفر سفر اضطراب سا کچھ

    ہر اک تعلق شکست مائل

    روش روش انقلاب سا کچھ

    وہ مشعل جاں بجھی بجھی سی

    کوئی بکھرتے گلاب سا کچھ

    وہ پھول ہاتھوں میں سنگ پارے

    وہ ایک پیسہ حساب سا کچھ

    وہ اس کے دل میں سوال جیسا

    مرے لبوں پہ جواب سا کچھ

    بس ایک حالت میں ہی ملا وہ

    گرہن میں آفتاب سا کچھ

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY