ہیں اور کئی ریت کے طوفاں مرے آگے

غلام مرتضی راہی

ہیں اور کئی ریت کے طوفاں مرے آگے

غلام مرتضی راہی

MORE BYغلام مرتضی راہی

    دلچسپ معلومات

    معزرت کے ساتھ غالبؔ کی نذر ان ہی کے قافیہ میں

    ہیں اور کئی ریت کے طوفاں مرے آگے

    پھیلے گا ابھی اور بیاباں مرے آگے

    باہر نہیں کوئی بھی مری حد نظر سے

    مخفی ہے کوئی کوئی نمایاں مرے آگے

    ہستی مری صحرا ہے سراب اس کا مقدر

    آخر اسے ہونا ہے پشیماں مرے آگے

    ہوں میل کے پتھر کی طرح راہ گزر میں

    منزل پہ نظر رکھتے ہیں انساں مرے آگے

    طے ہو نہ سکی دورئ منزل یہ الگ ہے

    ہر موڑ پہ روشن رہا امکاں مرے آگے

    کاندھے پہ مرے بوجھ رہا رخت سفر کا

    یوں نکلا کیے بے سر و ساماں مرے آگے

    جو صلح و صفائی میں ہیں پیچھے ابھی راہیؔ

    رہتے ہیں بہم دست و گریباں مرے آگے

    مأخذ :
    • کتاب : Kulliyat-e-Rahi (Pg. 245)
    • Author : Ghulam Murtaza Rahi
    • مطبع : Educational Publishing House (2012)
    • اشاعت : 2012

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY