ہم جو محفل میں تری سینہ فگار آتے ہیں

علی سردار جعفری

ہم جو محفل میں تری سینہ فگار آتے ہیں

علی سردار جعفری

MORE BYعلی سردار جعفری

    ہم جو محفل میں تری سینہ فگار آتے ہیں

    رنگ‌ بر دوش گلستاں بہ کنار آتے ہیں

    چاک دل چاک جگر چاک گریباں والے

    مثل گل آتے ہیں مانند بہار آتے ہیں

    کوئی معشوق سزا وار غزل ہے شاید

    ہم غزل لے کے سوئے شہر نگار آتے ہیں

    کیا وہاں کوئی دل و جاں کا طلب گار نہیں

    جا کے ہم کوچۂ قاتل میں پکار آتے ہیں

    قافلے شوق کے رکتے نہیں دیواروں سے

    سینکڑوں مجس و زنداں کے دیار آتے ہیں

    منزلیں دوڑ کے رہرو کے قدم لیتی ہیں

    بوسۂ پا کے لیے راہ گزار آتے ہیں

    خود کبھی موج و تلاطم سے نہ نکلے باہر

    پار جو سارے زمانے کو اتار آتے ہیں

    کم ہو کیوں ابروئے قاتل کی کمانوں کا کھنچاؤ

    جب سر تیر ستم آپ شکار آتے ہیں

    مأخذ :
    • کتاب : Kulliyat-e-Ali Sardar Jafri Vol.II (Pg. 233)
    • Author : Ali Ahmad Fatmi
    • مطبع : Qaumi Council Baray-e-farog Urdu Zaban, New Delhi (2005)
    • اشاعت : 2005

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے