ہم مسلسل اک بیاں دیتے ہوئے

آلوک مشرا

ہم مسلسل اک بیاں دیتے ہوئے

آلوک مشرا

MORE BY آلوک مشرا

    ہم مسلسل اک بیاں دیتے ہوئے

    تھک چکے ہیں امتحاں دیتے ہوئے

    بے زباں الفاظ کاغذ پر یہاں

    گونگی یادوں کو زباں دیتے ہوئے

    ہو گئے غرقاب اس کی آنکھ میں

    خواہشوں کو ہم مکاں دیتے ہوئے

    پھر ابھر آیا تری یادوں کا چاند

    اجلا اجلا سا دھواں دیتے ہوئے

    لطف جلنے کا الگ ہے ہجر میں

    زخم میرے امتحاں دیتے ہوئے

    لا رہے ہیں نیند کے آغوش میں

    اشک مجھ کو تھپکیاں دیتے ہوئے

    رو پڑا تھا جانے کیوں وہ ڈاکیہ

    آج مجھ کو چٹھیاں دیتے ہوئے

    اک بلا کا شور تھا آنکھوں میں پر

    کہہ نہ پایا کچھ وہ جاں دیتے ہوئے

    فاصلہ اتنا نہ رکھنا تھا خدا

    اس زمیں کو آسماں دیتے ہوئے

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    آلوک مشرا

    آلوک مشرا

    RECITATIONS

    آلوک مشرا

    آلوک مشرا

    آلوک مشرا

    ہم مسلسل اک بیاں دیتے ہوئے آلوک مشرا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY