ہمارے ہاتھ میں کب ساغر شراب نہیں

اختر شیرانی

ہمارے ہاتھ میں کب ساغر شراب نہیں

اختر شیرانی

MORE BYاختر شیرانی

    ہمارے ہاتھ میں کب ساغر شراب نہیں

    ہمارے قدموں پہ کس روز ماہتاب نہیں

    جہاں میں اب کوئی صورت پئے ثواب نہیں

    وہ مے کدے نہیں ساقی نہیں شراب نہیں

    شب بہار میں زلفوں سے کھیلنے والے

    ترے بغیر مجھے آرزوئے خواب نہیں

    چمن میں بلبلیں اور انجمن میں پروانے

    جہاں میں کون غم عشق سے خراب نہیں

    غم آہ عشق کے غم کا کوئی نہیں موسم

    بہار ہو کہ خزاں کب یہ اضطراب نہیں

    امید پرسش احوال ہو تو کیوں کر ہو

    سلام کا بھی تری بزم میں جواب نہیں

    وطن کا چھیڑ دیا کس نے تذکرہ اخترؔ

    کہ چشم شوق کو پھر آرزوئے خواب نہیں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY