ہماری آنکھوں میں اشکوں کا آ کے رہ جانا

شاد عظیم آبادی

ہماری آنکھوں میں اشکوں کا آ کے رہ جانا

شاد عظیم آبادی

MORE BYشاد عظیم آبادی

    ہماری آنکھوں میں اشکوں کا آ کے رہ جانا

    جھکا کے سر کو ترا مسکرا کے رہ جانا

    دلا بہت نہ الجھ نامہ بر کو کیا میں نے

    سکھا دیا تھا کہ جانا تو جا کے رہ جانا

    شہید ناز کی بھولی نہیں مجھے صورت

    تری طرف کو نگاہیں پھرا کے رہ جانا

    وہ بزم غیر وہ ہر بار اضطراب مرا

    بہ مصلحت وہ ترا مسکرا کے رہ جانا

    ٹھہر تو جا رخ جاناں پہ اے نگہ کچھ دیر

    سند نہیں فقط آنسو بہا کے رہ جانا

    نگاہ ناز سے ساقی کا دیکھنا مجھ کو

    مرا وہ ہاتھ میں ساغر اٹھا کے رہ جانا

    جو پوچھیں حشر میں کچھ وہ تو ہاں دلا شاباش

    وہاں بھی تو یوں ہی باتیں بنا کے رہ جانا

    اگر تھا نشہ تو گرنا تھا پائے خم پہ مجھے

    مجھے پسند نہیں لڑکھڑا کے رہ جانا

    نہیں یہ حسن نہیں بخت کی ہے کوتاہی

    سوال وصل کا ہونٹوں تک آ کے رہ جانا

    کسی طرح تو یہ جسم کثیف پاک ہو شاد

    گلی میں یار کی جانا تو جا کے رہ جانا

    مآخذ :
    • کتاب : Dewan-e-shad Azimabadi (Pg. 137)
    • Author : Shad Azimabadi
    • مطبع : Educational Publishing House (2005)
    • اشاعت : 2005

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY