ہر خوف ہر خطر سے گزرنا بھی سیکھئے

ابو محمد سحر

ہر خوف ہر خطر سے گزرنا بھی سیکھئے

ابو محمد سحر

MORE BY ابو محمد سحر

    ہر خوف ہر خطر سے گزرنا بھی سیکھئے

    جینا ہے گر عزیز تو مرنا بھی سیکھئے

    یہ کیا کہ ڈوب کر ہی ملے ساحل نجات

    سیلاب خوں سے پار اترنا بھی سیکھئے

    ایسا نہ ہو کہ خواب ہی رہ جائے زندگی

    جو دل میں ٹھانئے اسے کرنا بھی سیکھئے

    بگڑے بہت کشاکش ناز و نیاز میں

    اب اس کی انجمن میں سنورنا بھی سیکھئے

    ہوتا ہے پستیوں کے مقدر میں بھی عروج

    اک موج تہ نشیں کا ابھرنا بھی سیکھئے

    اوروں کی سرد مہری کا شکوہ بجا سحرؔ

    خود اپنے دل کو پیار سے بھرنا بھی سیکھئے

    مآخذ:

    • کتاب : Barg-e-Sahar (Pg. 53)
    • Author : Abu Mohammad Sahar
    • مطبع : Maktaba-e-Adab (2002)
    • اشاعت : 2002

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY