ہر شعر کو گلاب کیا کیا غلط کیا

خالد یوسف

ہر شعر کو گلاب کیا کیا غلط کیا

خالد یوسف

MORE BYخالد یوسف

    ہر شعر کو گلاب کیا کیا غلط کیا

    ہاں تیرا انتخاب کیا کیا غلط کیا

    روندا نہیں کبھی کسی جگنو کو زیر پا

    ذرے کو آفتاب کیا کیا غلط کیا

    لب پر ہر ایک شخص کے تھی مصلحت کی مہر

    ہم نے ہی کچھ خطاب کیا کیا غلط کیا

    جو ماورائے ذہن فقیہاں تھا وہ گناہ

    اس کا بھی ارتکاب کیا کیا غلط کیا

    کب تک پسیں گے ظلم کی چکی میں میرے لوگ

    اعلان انقلاب کیا کیا غلط کیا

    جو دشمن‌ عوام تھے نفرت انہیں سے کی

    اور عشق بے حساب کیا کیا غلط کیا

    اس آس میں کہ سب کو میسر ہو سکھ کی نیند

    قرباں ہر ایک خواب کیا کیا غلط کیا

    آیا ادب برائے ادب کا خیال جب

    لکھنے کا بند باب کیا کیا غلط کیا

    خالدؔ رہے نہ سب کی طرح بس قلم قلی

    ظلمت کو بے نقاب کیا کیا غلط کیا

    مأخذ :
    • کتاب : Jugnu Tare (Pg. 118)
    • Author : Khalid Yusuf
    • مطبع : Kifayat Acadami,karachi (2009)
    • اشاعت : 2009

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے