Font by Mehr Nastaliq Web

aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

حرف و الفاظ و معانی کے حجابوں میں نہ تھی

فضا ابن فیضی

حرف و الفاظ و معانی کے حجابوں میں نہ تھی

فضا ابن فیضی

MORE BYفضا ابن فیضی

    حرف و الفاظ و معانی کے حجابوں میں نہ تھی

    بات چہروں پر جو لکھی تھی کتابوں میں نہ تھی

    عمر گزری اپنے ہی گھر کا بیاباں چھانتے

    دل کشی اتنی تو چمکیلے سرابوں میں نہ تھی

    میں تھا اپنے عہد کی سچائیوں کا وہ سوال

    جس کو رد کرنے کی گنجائش جوابوں میں نہ تھی

    اب ہوا معلوم تیرے شہر سے ہجرت کے بعد

    کیا خرابی تھی جو ہم خانہ خرابوں میں نہ تھی

    انگلیوں کی یہ جراحت یہ قلم کی خستگی

    کب ہماری زندگی ایسے عذابوں میں نہ تھی

    کر رہا ہوں کاروبار شعر میں اپنے کو خرچ

    ورنہ ایسی مد کوئی گھر کے حسابوں میں نہ تھی

    یہ بھی شعری تجربوں کا اک تسلسل ہے فضاؔ

    اب غزل جیسی ہے وہ کتنوں کے خوابوں میں نہ تھی

    مأخذ:

    تحریک،نئی دہلی (Pg. 21)

      • ناشر: گوپال متل
      • سن اشاعت: 1978

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے